اُردُولُغت

اردو ذخیرہ الفاظ

آن لائن اردو لغت مفصل تلاش کے ساتھ

https://www.urdulughat.pk/Post/boorhi-malka

بوڑھی ملکہ

بوڑھی ملکہ

 

چار غلام  ایک بوڑھی ملکہ کو جو تخت پر محو خواب تھی کھڑے پنکھا جھل رہے تھے۔ ملکہ خراٹے لے رہی تھی۔ اس کی گود میں ایک بلی لیٹی غرا رہی تھی، اور غلاموں کی طرح سستائی ہوئی نگاہوں سے دیکھ رہی تھی۔ 

پہلے غلام نے کہا:بڑھیا نیند میں کس قدر بد صورت نظر آتی ہے،  دیکھو تو اس کا چہرہ کیسے لٹک گیا ہے۔  اور سانس کس طرح لے رہی ہے جیسے شیطان اس کا گلہ گھونٹ رہا ہو۔

بلی نے غراتے ہوئے کہا: یہ نیند کے عالم میں اتنی بدنما معلوم نہیں ہوتی  جتنے کہ تم غلام،  بیداری کی حالت میں معلوم ہوتے ہو۔

دوسرے غلام نے کہا : تم یہ سوچ رہے ہو گے  کہ نیند میں اس کی جھریاں گہری ہونے کی بجائے نکھر رہی ہیں۔ یہ ضرور کوئی برا خواب دیکھ رہی ہے۔

بلی نے غرا کر کہا: کاش تم بھی سو کر اپنی آزادی کے خواب دیکھتے۔

تیسرے غلام نے کہا:  یہ ان لوگوں کا جلوس دیکھ رہی ہے ، جو اس نے قتل کئے ہیں۔

بلی نے غڑاتے ہوئے کہا:  ہاں یہ تمہارے آبائو اجداد  اور تمہارے ورثاء کا جلوس دیکھ رہی ہے۔

چوتھے غلام نے کہا: اس کے متعلق باتیں کرنا تو ایک اچھا مشغلہ ہے، لیکن کھڑے کھڑے پنکھا جلنا کوئی کم مصیبت نہیں۔

بلی نے غراتے ہوئے کہا:  تم ابد تک پنکھا جھلتے رہو گے۔ جیسے تم زمین پر  ہو ایسے ہی تم آسمان  پر رہو گے۔

اس وقت  بوڑھی ملکہ نے سوتے  میں اپنے سر کو جھٹکا دیا اور اس کا تاج زمین پر آ گرا۔

ایک غلام نے کہا: یہ برا شگون ہے۔

بلی نے غرا کر کہا:ایک شخص کا برا شگون ، دوسرے کے لیے نیک شگون ہوتا ہے۔ 

دوسرے غلام نے کہا:  اگر یہ بیدار ہوجائے اور اپنا تاج زمین پر گرا ہوا پائے تو یہ ہمیں قتل کر دے گی۔

بلی نے غراتے ہوئے کہا: تمہاری پیدائش کے وقت  سے یہ تمہیں  ہر روز قتل کر رہی ہے، لیکن تم نہیں جانتے۔

تیسرے غلام نے کہا: ہاں  یہ ہمیں قتل کر دے گی، اور اسے دیوتائوں کی قربانی تصور کرے گی۔

بلی نے غرا کر کہا: صرف کمزور ہی دیوتائوں کی بھینٹ چڑھائے جاتے ہیں۔

 چوتھے غلام نے دوسرے غلاموں کو چپ کرواتے ہوئے اور ملکہ کو بیدار کئے بغیر ملکہ کا تاج   کو دوبارہ آہستہ سے اس کے سر پر رکھ دیا۔

بلی نے غراتے  ہوئے کہا: صرف ایک  غلام ہی گرے ہوئے تاج کو دوبارہ اس کی جگہ پر رکھ سکتا ہے۔

کچھ دیر بعد بوڑھی ملکہ بیدار ہوئی۔اس نے اپنے ارد گرد دیکھا اور ایک جمائی لی اور کہا:   میرا خیال ہے کہ میں ایک خواب دیکھ رہی تھی۔ میں نے دیکھا  کہ ایک بچھو شاہ بلوط کے ایک پرانے درخت کے ارد گرد  چار کیچوئوں کا تعاقب کر رہا  ہے۔ یہ خواب مجھے پسند نہیں، یہ کہہ کر وہ پھر آنکھیں بند کر کے سو گئی۔ اور خراٹے لینا شروع کر دیے۔ چاروں غلام اسے پنکھا جھلتے رہے۔

بلی نے غرا کر کہا: جھلتے جائو۔۔۔۔۔ ہاں ! پنکھا جھلتے جائو بےوقوفو اور اس آگ کو ہوا دیتے جائو ، جو تمہیں لپیٹ میں لے رہی ہے۔

ملتے جلتے آرٹیکلز